021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
سحر﴿ جادو سے ﴾ذہنی مریض کی طلاق کاحکم
70306طلاق کے احکامطلاق دینے اورطلاق واقع ہونے کا بیان

سوال

ایک   شاد ی  شدہ شخص    حادثے  میں  دونوں  ٹانگوں  سے  معذور  ہوگیا  دواؤں  کی  بکثرت  استعمال   اور  دیگر پریشانیوں  کی وجہ   سے   ذہنی  مریض  بن گیا ،ان کا   خیال  یہ   ہے  کہ ذہنی دباؤ   جادو کا اثر ہے ، اس  نے   ذہنی  مرض  کی حالت  میں بیوی کوتین  طلاق  دیدی  ،  تفصیل منسلکہ   اوراق  میں ہے ۔ سوال  یہ  ہے سوال میں  ذکر کردہ  تفصیل کے مطابق  یہ طلاقین  واقع  ہوئی  یا نہیں ؟ 

﴿ سائل کا سالہ  سجاد  صاحب نے فون پر  بتایا     کہ میاں  بیوی  دونوں میں طلاق  اور جدائی کو  آٹھ  سال کا عرصہ گزر  گیا اس کے بعد  خاتون اپنے ایک  بچہ اور  بچی کو  لیکر  کراچی میں والدین  کے گھر  آباد ہے ، جبکہ میاں  پشاور اپنے گھر میں ،بقول  ان کے ایک رشتہ دار  ڈاکٹر  نے  زبانی  بتا یا  کہ  عارف کا  دماغ  کمزور ہوگیا  ۔لیکن  نفسیاتی ہونے کا  یا اس کے   علاج  معالجہ کی کوئی رپوٹ  موجود نہیں  ہے، اور میں  خود بھی اس   کے  نفسیاتی مریض پر  گواہی  نہیں  دے سکتا ، ٹانگ  کٹنے سے پہلے ہم لوگ  تبلیغ  میں  ساتھ  جاتے تھے ، اور  حادثہ کے دن بھی  ساتھ تھا، لیکن  طلاق کے  بعد اس سے تعلق  منقطع ہے،وہ ہمارے پاس  بار بار  جرگہ  لیکر  آتا ہے کہ  میں  بیوی  بچوں  کو  دوبارہ  ساتھ لیکر  جانا چاہتا ہوں ، اس  میں شریعت  کا  فیصلہ  چاہئے﴾

o

سحر زدہ  شخص کی طلاق  کاحکم  یہ ہے کہ   اگر  واقعتا    کسی  پر  جادو ہوا  ہو  اور  وہ شخص  جاودو کے اثر  سے  اس  قدر متاثر  ہوا  کہ  اس کی  عقل  میں خلل  آگیا، وہ  ذہنی  طور  پر اس قدر  مفلوج  ہوا کہ اس کو اچھے برے کی تمیز  نہ  رہی  ، بیوی اور ماں  میں  فرق نہیں کرپاتا ہے ،تو ایسا  شخص  مجنون  اور  مدہوش  کے حکم  میں  داخل ہونے کی  وجہ اس کاکلام غیر  معتبر  ہوتا  ہے ،اس  حالت میں  اس  کی  دی  ہوئی  طلاق  بھی   واقع نہیں ہوتی ،البتہ   صورت مسئولہ میں میاں  اور  بیوی دونوں   کی  پوری  تحریر   پڑھنے  سے  ،اور   مذکور  شخص  کے سالہ  سجاد  کا   فون   پر  گفتگو   سے   ظاہر  ہوتاہے  کہ  یہ شخص   ذہنی  انتشار اورپریشانی  میں  مبتلاتھا لیکن اس شخص  کی  حالت   طلاق  کے وقت مجنون  یا مدہوش کی حد تک  نہیں پہنچی  تھی،اس لئے  اس کی دی ہوئی  تین  طلاق  واقع ہوگئی  ہیں  ، عورت  شوہر  پر حرام  ہوگئی  ہے،  اب دونوں کے لئے میاں  بیوی کی حیثیت  سے ساتھ  رہنا ناجائز  اور حرام ہے ۔ اور حلالہ  شرعیہ  کے بغیر  دوبارہ  دونوں کا آپس میں نکاح   نہیں ہوسکتا ۔

حلالہ  شرعیہ  یہ ہے کہ﴿ شوہر کی عدت تین ماہواری  گذرنے کے  بعد  عورت  کسی  دوسری جگہ  غیر  مشروط  شادی کرلے ،پھر  وہ شوہراپنی  مرضی سے طلاق دیدے یا اس کی  وفات ہوجائے  ،پھر  دوسرے  شوہر کی عدت بھی  گذر جائے ، اس کےبعد آپس  کی رضامندی  سے نئے مہر کے عوض میں   دوبارہ نکاح ہو سکتا ہے

حوالہ جات

الفتاوى الهندية (8/ 125)     
رجل قال لامرأته أنت طالق أنت طالق أنت طالق فقال عنيت بالأولى الطلاق وبالثانية     والثالثة إفهامها صدق ديانة وفي القضاء طلقت ثلاثا كذا في فتاوى قاضي خان
{فَإِنْ طَلَّقَهَا فَلَا تَحِلُّ لَهُ مِنْ بَعْدُ حَتَّى تَنْكِحَ زَوْجًا غَيْرَهُ } [البقرة: 230]
الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (3/ 244)               
فالذي ينبغي التعويل عليه في المدهوش ونحوه إناطة الحكم بغلبة الخلل في أقواله وأفعاله الخارجة عن عادته، وكذا يقال فيمن اختل عقله لكبر أو لمرض أو لمصيبة فاجأته: فما دام في حال غلبة الخلل في الأقوال والأفعال لا تعتبر أقواله وإن كان يعلمها ويريدها لأن هذه المعرفة والإرادة غير معتبرة لعدم حصولها عن الإدراك صحيح كما لا تعتبر من الصبي العاقل،          

             احسان اللہ شائق عفا اللہ عنہ    

       دارالافتاء جامعة الرشید    کراچی

۳۰ صفر ١۴۴۲ھ

n

مجیب

احسان اللہ شائق صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سیّد عابد شاہ صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔