021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
وقت پر فیس نہ ملنے کی پریشانی کاحل
70415اجارہ یعنی کرایہ داری اور ملازمت کے احکام و مسائلکرایہ داری کے متفرق احکام

سوال

کیا  فرماتے ہیں  علماء دین اس مسئلہ کے بارے میں   کہ  اسکول  میں زیر تعلیم بچوں  کے والدین   اسکول کی ماہانہ فیس   وقت پر ادا  نہیں کرتے جس   سے ادارہ کو کافی مشکلات    پیش آتی ہیں ، اس مشکل کاحل  متعدد  اداروں نے یہ نکالا ہے  کہ تاخیر سے فیس  جمع کرنے والوں  سے  جرمانہ وصول کیاجاتا  ہے ۔ سوال یہ ہے کہ   تاخیر سے  فیس جمع کروانے والوں سے جرمانہ وصول کرنا  درست ہے  یانہیں ؟ اگرجرمانہ  وصول کرنا  درست  نہیں  تو اس کا متبادل جائز صورت  کیاہوسکتی ہے ؟

o

بچوں کے والدین کی طرف سے  ماہانہ  فیس کی  ادائیگی میں  تاخیر کرنے پر  مالی جرمانہ وصول کرنا حنفیہ کے نزدیک  جائز نہیں ہے ،اس لئے مالی جرمانہ وصول نہ کیاجائے ۔اس  کی ایک متبادل جائز  صورت یہ ہوسکتی ہے کہ داخلہ کےوقت بتادیاجائے کہ فیس  کی ادائیگی  میں اتنے  دن کی تاخیر پر بچے کو اسکول سے  خارج کردیاجائے گا ،اس کے بعد دوبارہ داخلہ بحالی پر اتنی اضافی فیس  وصول کی جائے گی ،اس معاہدے  کے بعدضرورت کے وقت   اس  ضابطہ پر عمل کیاجائے تو  ان شااللہ تعالی فیس کی وصولی میں پریشانی نہ ہوگی ۔

حوالہ جات

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (4/ 61)
(لا بأخذ مال في المذهب) بحر. وفيه عن البزازية: وقيل يجوز، ومعناه أن يمسكه مدة لينزجر ثم يعيده له، فإن أيس من توبته صرفه إلى ما يرى. وفي المجتبى أنه كان في ابتداء الإسلام ثم نسخ.     
{يَاأَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا لَا تَأْكُلُوا أَمْوَالَكُمْ بَيْنَكُمْ بِالْبَاطِلِ إِلَّا أَنْ تَكُونَ تِجَارَةً عَنْ تَرَاضٍ مِنْكُمْ وَلَا تَقْتُلُوا أَنْفُسَكُمْ إِنَّ اللَّهَ كَانَ بِكُمْ رَحِيمًا (29) } [النساء: 29، 30]
مشكاة المصابيح للتبريزي (2/ 165)
قال رسول الله صلى الله عليه و سلم : " ألا تظلموا ألا لا يحل مال امرئ إلا بطيب نفس منه " . رواه البيهقي في شعب الإيمان والدارقطني في المجتبى
﴿   ملخص  از   کذافی امداد الفتاوی  ج2/543﴾    

احسان اللہ شائق عفا اللہ عنہ    

       دارالافتاء جامعة الرشید    کراچی

١۵ ربیع الاول ١۴۴۲ھ

n

مجیب

احسان اللہ شائق صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سیّد عابد شاہ صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔