021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
ڈیکوریشن کے سامان پر زکوٰۃ کاحکم
..اجارہ یعنی کرایہ داری اور ملازمت کے احکام و مسائلکرایہ داری کے متفرق احکام

سوال

میرا ڈیکوریشن کا کام ہے۔ہمارے پاس شادی بیاہ اور دیگر تقریبات کے لیے ٹینٹ ،قالین اور کھانے میں استعمال ہونے والے ہر طرح کے برتن وغیرہ ہوتے ہیں۔یہ سارا سامان ہم نے باقاعدہ بازار سے خریدا ہوا ہوتا ہے۔ہم یہ سامان کرایہ پر دیتے ہیں اور طے شدہ کرایہ وصول کرتے ہیں۔کبھی یہ سامان ہمارے اپنے استعمال میں بھی آجاتا ہے۔کیا اس سامان پر زکوٰۃ واجب ہوگی؟

o

ڈیکوریشن اور دیگر مذکورہ سامان پر زکوٰۃ واجب نہیں ہوگی،بلکہ ان کو کرایہ پر دینے سے جو آمدنی حاصل ہوگی وہ نصاب کو پہنچ جائے اور اس پر سال بھی گزر جائے تو اس آمدنی پر زکوٰۃ واجب ہوگی۔

حوالہ جات

الفتاوى الهندية - (1 / 180) ولو اشترى قدورا من صفر يمسكها ويؤاجرها لا تجب فيها الزكاة كما لا تجب في بيوت الغلة، فتاوى قاضيخان - (1 / 123) ولو اشترى قدوراً من صفر يمسكها أو يؤاجرها لا تجب فيها الزكاة كما لا تجب في بيوت الغلة الدر المختار - (2 / 264) ( ولا في ثياب البدن ) المحتاج إليها لدفع الحر والبرد ابن ملك ( وأثاث المنزل ودور السكنى ونحوها ) وكذا الكتب وإن لم تكن لأهلها إذا لم تنو للتجارة غير أن الأهل له أخذ الزكاة وإن ساوت نصبا إلا أن تكون غير فقه وحديث وتفسير أو تزيد على نسختين منها هو المختار وكذلك آلات المحترفين إلا ما يبقى أثر عينه۔۔۔ الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) - (2 / 265) (قوله: وكذلك آلات المحترفين) أي سواء كانت مما لا تستهلك عينه في الانتفاع كالقدوم والمبرد أو تستهلك.
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔