021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
دعاعیدکی نمازکے بعدہے یاخطبہ کے بعد؟
..نماز کا بیانجمعہ و عیدین کے مسائل

سوال

عیدین کی نمازوں میں سلام کےبعددعامانگنی چاہیے یاخطبہ کےبعد؟نیزرسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کس وقت دعامانگتے تھے؟

o

عیدین کی نمازکے موقع پردعا مانگنے کاذکرتوحدیث میں ملتاہے،لیکن وضاحت کےساتھ اس کاذکرنہیں کہ یہ دعاکس وقت مانگی جاتی تھی ؟نمازکے بعدیاخطبہ کے بعد؟اس لئے دونوں طرح )عیدکی نمازکے بعدیاخطبہ کے بعد(سےدعامانگنادرست ہے،البتہ بہتریہ ہے کہ نمازکے بعددعامانگی جائے،کیونکہ ہرنمازکےبعددعامانگنامستحب ہے،لیکن واضح رہے کہ اجتماعی دعانمازکے بعدمانگی جائے یاخطبہ کے بعداس کولازم اورسنت نہ سمجھاجائے اورنہ کسی چھوڑنے والے کومطعون کیاجائے۔

حوالہ جات

صحيح البخاري (ج 2 / ص 20): عن أم عطية قالت:﴿ كنا نؤمر أن نخرج يوم العيد حتى نخرج البكر من خدرها حتى نخرج الحيض فيكن خلف الناس فيكبرن بتكبيرهم ويدعون بدعائهم يرجون بركة ذلك اليوم وطهرته﴾ صحيح البخاري (ج 2 / ص 22): عن حفصة بنت سيرين قالت :كنا نمنع جوارينا أن يخرجن يوم العيد ،فجاءت امرأة ،فنزلت قصر بني خلف فأتيتها، فحدثت أن زوج أختها غزا مع النبي صلى الله عليه وسلم ثنتي عشرة غزوة فكانت أختها معه في ست غزوات فقالت :فكنا نقوم على المرضى ونداوي الكلمى، فقالت: يا رسول الله! أعلى إحدانا بأس إذا لم يكن لها جلباب أن لا تخرج؟ فقال:( لتلبسها صاحبتها من جلبابها فليشهدن الخير ودعوة المؤمنين.)
..

n

مجیب

محمد اویس صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سعید احمد حسن صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔