021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
سودی اداروں کے سودی کاغذات فوٹی کاپی کرنا
60326-1جائز و ناجائزامور کا بیانجائز و ناجائز کے متفرق مسائل

سوال

ہمارے قریب ایچ بی ایلHBL بینک ہے ہمارے استاذ نے ان کے ساتھ فوٹوکا کاپی کے حوالے سے ماہوار کھاتہ کھلوا رکھاہے،ان فوٹو کاپیوں میں اکثر بینک سے جو گ سودی قرضے لیتے ہیں ان کی ہوتی ہے ،میں نے اپنے تبلیغی مرکز میں سناہے کہ سود کے کاغذات تیارکرنے ولابھی اس میں شامل ہے ؟ہمارے اس کام کا شرعی حکم کیاہے ؟مطلع فرمائیں۔

o

HBL اوردیگر سودی اداروں کے سودی کاغذات کی فوٹی کاپی کرناسود ی معاملات میں معاونت میں داخل ہونے کی وجہ سےجائز نہیں ۔

حوالہ جات

{وَتَعَاوَنُوا عَلَى الْبِرِّ وَالتَّقْوَى وَلَا تَعَاوَنُوا عَلَى الْإِثْمِ وَالْعُدْوَانِ وَاتَّقُوا اللَّهَ إِنَّ اللَّهَ شَدِيدُ الْعِقَابِ } [المائدة: 2] وفی تفسیر"فتح القدير" للشوكاني (2/ 9) ولما نهاهم عن الاعتداء أمرهم بالتعاون على البر والتقوى: أي ليعن بعضكم بعضا على ذلك، وهو يشمل كل أمر يصدق عليه أنه من البر والتقوى كائنا ما كان قيل: إن البر والتقوى لفظان لمعنى واحد، وكرر للتأكيد. وقال ابن عطية: إن البر يتناول الواجب والمندوب، والتقوى تختص بالواجب، وقال الماوردي: إن في البر رضا الناس وفي التقوى رضا الله، فمن جمع بينهما فقد تمت سعادته ثم نهاهم سبحانه عن التعاون على الإثم والعدوان، فالإثم: كل فعل أو قول يوجب إثم فاعله أو قائله، والعدوان: التعدي على الناس بما فيه ظلم، فلا يبقى نوع من أنواع الموجبات للإثم ولا نوع من أنواع الظلم للناس الذين من جملتهم النفس إلا وهو داخل تحت هذا النهي لصدق هذين النوعين على كل ما يوجد فيه معناهما. واللہ سبحانہ وتعالی اعلم
..

n

مجیب

سید حکیم شاہ صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔