021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
فیکٹری کے اثاثوں پر زکوٰۃ کا حکم
..زکوة کابیانان چیزوں کا بیان جن میں زکوة لازم ہوتی ہے اور جن میں نہیں ہوتی

سوال

ہم نے 2001 میں ایک گارمینٹس کی فیکٹری لگائی،تقریباً60 لاکھ روپے مالیت سے پورا سیٹ اپ ڈالا،ہم نے اس وقت ایک مفتی صاحب سے پوچھا تھا کہ کیا ہم پر اس کی زکوٰۃ ہوگی ؟ انہوں نے ہمیں صراحتاً جواب دیا تھا کہ نہیں ہوگی ،کیوں کہ مشینری اگر بیچنے اور تجارت کی نیت سے نہ خریدی جائے تو اس پر زکوٰۃ واجب نہیں ہوتی۔سلسلہ چلتا رہا ہم نے زکوٰۃ ادا نہیں کی ،گذشتہ دنوں ان سے ملاقات ہوئی ،گفتگو کے دوران انہوں نے ہم سے پوچھا کہ زکوٰۃ وغیرہ ادا کرتے ہو؟ ہم نے کہا کہ باقاعدہ زکوٰۃ کی نیت سے حساب کتاب کر کے تو نہیں کرتے کیوں کہ آپ نے بتایا تھا کہ اس مشینری پر زکوٰۃ واجب نہیں ہوتی،کہنے لگے کے ہاں بھائی میں نے بتایا تھا لیکن اس سے حاصل ہونے والی آمدنی پر تو زکوٰۃ واجب ہوگی۔سوال یہ ہے کہ ان کی بات کس حد تک درست ہے اور میرے لیے کیا حکم ہے؟

o

مفتی صاحب کی بات بالکل درست ہے۔زمین،مشینری اور پلانٹ وغیرہ اگرتجارت کی نیت سے نہ خریدےجائیں، یعنی اگرخود ان کی تجارت مقصود نہ ہوتوان پر زکوٰۃ واجب نہیں ہوتی،البتہ ان کے ذریعہ جو آمدنی حاصل ہوتی ہے اس پر زکوٰۃ واجب ہوتی ہے۔لہٰذا آپ کو سیٹ اپ ڈالنے کے بعد سے آج تک جو آمدنی حاصل ہوئی ہے، آپ پر اس کی زکوٰۃ ادا کرنافرض ہے۔

حوالہ جات

الدر المختار - (2 / 264) ( ولا (زکوٰۃ)في ثياب البدن ) المحتاج إليها لدفع الحر والبرد ابن ملك ( وأثاث المنزل ودور السكنى ونحوها) وكذا الكتب وإن لم تكن لأهلها إذا لم تنو للتجارة غير أن الأهل له أخذ الزكاة وإن ساوت نصبا إلا أن تكون غير فقه وحديث وتفسير أو تزيد على نسختين منها هو المختار وكذلك آلات المحترفين إلا ما يبقى أثر عينه۔۔۔ الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) - (2 / 265) (قوله: وكذلك آلات المحترفين) أي سواء كانت مما لا تستهلك عينه في الانتفاع كالقدوم والمبرد أو تستهلك.
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سیّد عابد شاہ صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔