021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
مری ہوئی بھیڑ کی اون فروخت کرنا
61520 خرید و فروخت کے احکامخرید و فروخت کے جدید اور متفرق مسائل

سوال

کیا فرماتے ہیں علماء کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ ہماری ایک بھیڑ مرگئی تھی،ہم نے اُ س کی اون کو کاٹ کر فروخت کیا تو کیا مری ہوئی بھیڑ کی اون کو فروخت کرنا صحیح ہے؟

o

مری ہوئی بھیڑ کی اون فروخت کرنا جائزہے۔

حوالہ جات

قال الإمام المرغینانی رحمہ اللہ تعالی:"ولا بأس ببیع عظام المیتۃ وعصبھا وصوفھا وقرنھا وشعرھا ووبرھا،والانتفاع بذلک کلہ؛لأنھا طاھرۃ، لا یحلّھا الموت؛لعدم الحیاۃ".(الھدایۃ:3/57،مکتبۃ رحمانیۃ) وقال الإمام قاضیخان رحمہ اللہ تعالی:"وبیع جلود المیتات باطل إذا لم تکن مذبوحۃ أو مدبوغۃ.ویجوز بیع عظامھا وعصبھا وصوفھا وظلفھا وشعرھا وقرنھا.(فتاوی قاضیخان:1/331،قدیمی کتب خانہ) وقال ابن نجیم رحمہ اللہ تعالی:"قولہ:(کعظم المیتۃ وصوفھا وعصبھا وقرنھا ووبرھا):أی یجوز بیعھا والانتفاع بھا؛لأنھا طاھرۃ ،لا یحلّھا الموت؛لعدم الحیاۃ".(البحر الرائق:6/133،134،مکتبۃ رشیدیۃ،کوئٹہ)
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

فیصل احمد صاحب / شہبازعلی صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔