021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
بیمہ کمپنی میں مرحوم کی جمع کرائی ہوئی رقم وصول کرنا
..خرید و فروخت کے احکامقرض اور دین سے متعلق مسائل

سوال

زید کا انتقال ہو چکا ہے انتقال کے اٹھارہ برس قبل اس نے ایک بیمہ کمپنی کی پالیسی لی تھی اور ایک سال کی اقساط جمع کرنے کے بعد کوئی قسط جمع نہیں کروائی جو کہ ڈیڑھ لاکھ روپے بنتے ہیں ۔اس کےانتقال کے بعد کیا وہ رقم جو زید نے جمع کروائی تھی واپس مل جائے تو اس کا لینا جائز ہے؟

o

زید کی جمع کروائی ہوئی رقم اس کے ورثاء کی ہے جو بیمہ کمپنی کے ذمے واجب الاداہے،اگر وہ رقم کسی بھی ذریعہ سے واپس مل جائے تو اس کا لینا اور استعمال کرنا ورثاء کے لیے جائز ہے۔

حوالہ جات

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (3/ 622) وفي زكاة الجوهرة: الدائن إذا ظفر بجنس حقه له أخذه بلا قضاء ولا رضا. واللہ سبحانہ و تعالی اعلم
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔