021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
سودی بینک کے کرنٹ اکاؤنٹ میں رقم رکھنے کا حکم
..سود اور جوے کے مسائلمختلف بینکوں اور جدید مالیاتی اداروں کے سود سے متعلق مسائل کا بیان

سوال

سوال:سودی بینک میں اگر بطور حفاظت کرنٹ اکاؤنٹ میں رقم رکھوائی جائے اور اس پر سود نہ لیا جائےتو یہ جائز ہے؟

o

سودی بینک کے کرنٹ اکاؤنٹ میں رقم رکھوانا ضرورتاً جائز ہے۔ چونکہ سودی بینک اس رقم کو بھی سود کے کاروبار میں استعمال کرتے ہیں اس لیے اس میں رقم رکھوانے سے پرہیز کرنا چاہیے۔ سودی بینک کے مقابلے میں،غیر سودی بینک میں رقم رکھوانا بہتر ہے۔

حوالہ جات

(فقہ البیوع ، ۲\۱۰۶۲) ولو نظرنا إلی الودائع المصرفیۃ ۔۔۔۔۔ وجدنا أن ایداع رجل أموالہ فی الحساب الجاری لیس سببا محرکا أو داعیا للمعاملات الربویۃ۔۔۔۔ وغایۃ مافی الباب أن یکون ھذا الإیداع مکروھاً کراھۃَتنرزیہٍ۔ولاشک أنّ کثیرا من المعاملات المشروعۃ الیوم أصبحت مرتبطۃ بالبنوک، ویحتاج الإنسان لإنجازھا أن یکون لہ حساب مفتوح فی إحدی البنوک، فالحاجۃ ظاھرۃٌ مشاھدۃٌ، وترتفع مثل ھذہ الکراھۃِ التنزیھیۃ بمثل ھذہ الحاجۃ إن شاءاللہ تعالی۔غیر أنّ ھذہ الرخصۃ انما یجوز العمل بھا إن لم یوجع مصرفٌ غیر ربویّ۔ فإن وجد بشکلٍ مقبولٍ شرعاً، فلایمنبغی العملُ بھذہ الرخصۃ۔
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / سعید احمد حسن صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔