021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
ادھار کی وجہ سے قیمت بڑھانا
63769 خرید و فروخت اور دیگر معاملات میں پابندی لگانے کے مسائلمتفرّق مسائل

سوال

ہمارے ہاں یہ رائج ہے کہ لوگ بیج اور کھاد وغیرہ ادھار خریدتے ہیں اور پھل ، سبزی ، گندم اور چاول وغیرہ جب تیار ہوجاتے ہیں تو ان کو بیچ کر بیج اور کھاد وغیرہ کی رقم مع اضافہ ادا کرتے ہیں۔ مثال کے طور پر اگر بیج نقد 3000 روپے کا 1ایک پیکٹ ہے تو ادھار 6 مہینے بعد اس کی قیمت 200 یا 300 روپے اضافی ادا کرنی ہوگی۔اسی طرح کھاد وغیرہ بھی۔کیا یہ شرعاً جائز ہے؟

o

مذکورہ صورت جائز ہے کہ نقد کے مقابلے میں ادھار کی قیمت رکھ دی جائے۔ البتہ اتنی بات ضروری ہے کہ بیج وغیرہ خریدتے وقت یہ بات وضاحت کے ساتھ طے کر دی جائے کہ معاملہ اضافی قیمت پر ادھار کے طور پر ہورہا ہے۔ لیکن اگر ایک مرتبہ کم قیمت طے ہوجانے کے بعد مدت بڑھا کر اس کے مقابلے میں قیمت میں اضافہ کردیا جائے تو یہ سود ہونے کہ وجہ سے جائز نہیں۔

حوالہ جات

المبسوط للسرخسي (13/ 143) ثم الإنسان في العادة يشتري الشيء بالنسيئة بأكثر مما يشتري بالنقد۔ العناية شرح الهداية (9/ 264) قال ( ومن اشترى غلاما بألف درهم نسيئة فباعه بربح مائة ولم يبين ) ذلك للمشتري ( فعلم المشتري ، فإن شاء رده ، وإن شاء قبل لأن للأجل شبها بالمبيع ) فإنه يزاد في الثمن لأجل الأجل۔ واللہ سبحانہ و تعالی اعلم
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / سعید احمد حسن صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔