021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
دیہاتی شخص کے شہر میں ہوتے ہوئے جمعہ کا حکم
70396نماز کا بیانجمعہ و عیدین کے مسائل

سوال

السلام علیکم مفتی صاحب!ایک دیہاتی شخص جو شہر سے ایک کلو میٹر کے فاصلے پر رہتا ہے جس پر جمعہ فرض نہیں۔ وہ جمعہ کے دن  کسی ضرورت سے شہر آتا ہے ۔ سوال یہ ہے کہ کیا اس شخص پر  مطلق طور پر جمعہ کی نماز پڑھنا ضروری ہوگی؟ یا  اگر اذان اول کے بعد  تک رکا رہا تو پھر ضروری ہوگی؟ یا سرے سے اس پر جمعہ کی نما زہی فرض نہیں۔

o

اگر دیہاتی شخص شہر میں جائے اور اس کا ٹھہرنے کا ارادہ ہو،اور شہر میں جمعہ کا وقت ہوجائے تو اس پر جمعہ فرض ہوجاتا ہے؛اس لیے کہ نمازوں میں یہ نہیں دیکھا جاتا کہ یہ شخص اصلا کہاں کا ہے؟ بلکہ یہ دیکھا جاتا ہے کہ اس وقت کس مقام پر ہے؟ یعنی  نماز کے وقت شہر/جگہ کا اعتبار ہوگا۔

          لہٰذا اگر کوئی شخص مسافر شرعی(ایسا شخص جو اپنے وطن سے سوا ستتر کلومیٹر یا اس سے زیادہ دوری پر ہو) نہیں ہے تو اس پر شہر میں ہونے کی صورت میں جمعہ لازم ہوگا ،لیکن اگر اس شخص کی نیت یہ ہو کہ جمعہ کی نماز پڑھنے سے پہلے مجھے اس شہر سے نکل جانا ہے تو پھر اس شخص پر جمعہ لازم نہیں ،چاہے وقت داخل ہونے سے پہلے نکلے یا بعد میں(اگرچہ اذان اول ہوچکی ہو)۔

           

حوالہ جات

و فی الفتاوی الھندیۃ:القروي إذا دخل المصر ونوى أن يمكث يوم الجمعة لزمته الجمعة؛ لأنه صار كواحد من أهل المصر في حق هذا اليوم وإن نوى أن يخرج في يومه ذلك قبل دخول الوقت أو بعد الدخول لا جمعة عليه ولو صلى مع ذلك كان مأجورا، كذا في فتاوى قاضي خان والتجنيس والمحيط.                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                    (الفتاوى الهندية :1/ 145)
                                       وقال العلامۃ الحصکفی رحمہ اللہ:(القروي إذا دخل المصر يومها إن نوى المكث ثمة ذلك اليوم لزمته) الجمعة (وإن نوى الخروج من ذلك اليوم قبل وقتها أو بعده لا تلزمه) لكن في النهر: إن نوى الخروج بعده لزمته، وإلا لا.وفي شرح المنية: إن نوى المكث إلى وقتها لزمته، وقيل لا (كما) لا تلزم (لو قدم مسافر يومها) على عزم أن لا يخرج يومها
                                                وقال ابن عابدین رحمہ اللہ:قوله :(القروي) بفتح القاف نسبة إلى القرية وأراد به المقيم أما المسافر فذكره بعد قوله:( لا تلزمه) لأنه في الأول صار كواحد من أهل المصر في ذلك اليوم وفي هذا لم يصر درر عن الخانية ،قوله:( لكن في النهر إلخ) مثله في الفيض، وحكى بعده ما في المتن بقيل ،قوله:(لزمته) أي إذا مكث إلى دخول وقتها وكذا يقال فيما ذكره بعده ،قوله: (وفي شرح المنية إلخ)
ونصه: وإن دخل القروي المصر يوم الجمعة، فإن نوى المكث إلى وقتها لزمته، وإن نوى الخروج قبل
دخوله لا تلزمه، وإن نواه بعد دخول وقتها تلزمه وقال الفقيه أبو الليث: لا تلزمه، وهو مختار قاضي خان. اهـ.(رد المحتار علی الدر المختار:2/162)

   محمد عثمان یوسف

     دارالافتاءجامعۃ الرشید کراچی

11ربیع الاول 1442ھ

n

مجیب

محمد عثمان یوسف

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / سعید احمد حسن صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔