021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
تقسیم سے پہلے ترکہ سے ذاتی اخراجات پورے کرنا
70795میراث کے مسائلمیراث کے متفرق مسائل

سوال

ہماری والدہ نے ایک مکان اپنی زندگی میں اپنے تین بیٹوں کو تحفۃً دیا تھا اور مالکانہ حقوق بھی دے دیے تھے۔تین بیٹوں میں سے ایک بیٹے نے اس مکان پر اپنے ذاتی پیسوں سے تعمیراتی کام کروایا جس کی وجہ سے دومنزلہ مکان تین منزلہ ہوگیا۔تینوں بھائی اس مکان کی الگ الگ منزل میں قیام پذیر ہیں۔والد کے انتقال کے بعد مذکورہ بھائی نے والد صاحب کے مشترکہ اکاؤنٹ سے کچھ رقم یہ کہہ کر نکالی کہ یہ وہ پیسے ہیں جو کہ میں نے تعمیراتی کام پر خرچ کیے تھے۔

والد صاحب کے مشترکہ اکاؤنٹ میں جو پیسہ بچا وہ ایک اور بھائی نے اپنے ذاتی تصرف میں لے لیا۔ اس طرح وہ مشترکہ اکاؤنٹ جو کہ والد صاحب نے اپنے دوبیٹوں کے ساتھ کھلوایا تھا وہ خالی ہوگیا۔

 دونوں بھائیوں کا یہ عمل جو کہ انہوں نے والد صاحب کے انتقال کے بعد کیا، اس کی کیا حیثیت ہے؟ جبکہ دوسرے ورثاء کی رائے یہ ہے کہ یہ پیسہ والد کا ترکہ تھا اور اس پیسہ کو ترکہ میں ہی تقسیم کرنا چاہیے تھا۔

o

بھائیوں کا یہ عمل جائز نہیں۔ دیگر ورثاء کی رائے درست ہے۔والد صاحب کی ملکیت میں جتنا پیسہ ہے وہ سب میراث میں تقسیم کرنا ضروری ہے۔البتہ اگر بھائیوں کا کوئی ذاتی پیسہ اس اکاؤنٹ میں موجود تھا یا والد صاحب نے اپنی زندگی میں کچھ رقم ان کو بطور ہبہ کے دی تھی تو وہ ان کی اپنی ملکیت ہے، وہ ترکہ میں تقسیم نہیں کی جائے گی۔

حوالہ جات

٫٫٫٫

سیف اللہ

             دارالافتا ءجامعۃالرشید کراچی

                                                                                     ھ 05/05/1442

n

مجیب

سیف اللہ بن زینت خان

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔