021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
دورانِ نماز چھوٹی سورتوں کے درمیان ایک چھوٹی سورت چھوڑنا
..نماز کا بیاننماز کےمفسدات و مکروھات کا بیان

سوال

کیافرماتے ہیں علماء کرام درج ذیل مسئلہ کے بارے میں کہ کیانماز کی حالت میں تلاوت کے دوران درمیان میں سےایک سورت چھوڑنا مکروہ ہے ؟جیسے کہ پہلی رکعت میں قل ھواللہ احد پٹرھی اورپھر قل اعوذبرب الفلق چھوڑ کر قل اعوذبرب الناس تلاوت کی توکیا یہ مکروہ ہوگا ،میں نے کسی سے سنا ہے کہ درمیان میں ایک چھوٹی سورت چھوڑنا مکروہ ہے کیا یہ صحیح ہے ؟

o

فرائض اورواجبات میں دوسورتوں کے درمیان میں کوئی چھوٹی سورت قصدا ًچھوڑدینا مکروہِ تنزیہی ہے۔

حوالہ جات

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (1/ 546): ويكره الفصل بسورة قصيرة. وفی حاشية ابن عابدين (رد المحتار) (1/ 546) (قوله ويكره الفصل بسورة قصيرة) أما بسورة طويلة بحيث يلزم منه إطالة الركعة الثانية إطالة كثيرة فلا يكره شرح المنية: كما إذا كانت سورتان قصيرتان، وهذا لو في ركعتين أما في ركعة فيكره الجمع بين سورتين بينهما سور أو سورة فتح. وفي التتارخانية: إذا جمع بين سورتين في ركعة رأيت في موضع أنه لا بأس به. وذكر شيخ الإسلام لا ينبغي له أن يفعل على ما هو ظاهر الرواية. اهـ.وفي شرح المنية: الأولى أن لا يفعل في الفرض ولو فعل لا يكره إلا أن يترك بينهما سورة أو أكثر
..

n

مجیب

سید حکیم شاہ صاحب

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔