021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
سامان تجارت کی زکوٰۃ میں قیمت فروخت کا اعتبار ہے
..زکوة کابیانسامان تجارت پر زکوۃ واجب ہونے کا بیان

سوال

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ ایک تاجر اپنی دکان کے مال تجارت کی زکوٰۃ نکالنا چاہتا ہے تو کس قیمت کے اعتبار سے نکالے قیمت خرید یا قیمت فروخت؟

o

سامان تجارت کی زکوٰۃ نکالتے وقت قیمت فروخت کا اعتبار ہوگا۔پھر اگر کام تھوک کا ہو تو تھوک کی قیمت فروخت کا اعتبار ہوگا۔اگر پرچون کا کام ہو یا دونوں طرح کا ہو تو پرچون کی قیمت فروخت لگائی جائے گی۔

حوالہ جات

قال العلامۃ الحصکفی رحمہ اللہ تعالی:" وتعتبر القيمة يوم الوجوب، وقالا يوم الأداء. وفي السوائم يوم الأداء إجماعا، وهو الأصح.ويقوم في البلد الذي المال فيه.ولو في مفازة ففي أقرب الأمصار إليه. فتح. وقال العلامۃ ابن عابدین رحمہ اللہ تعالی:" وفي المحيط: يعتبر يوم الأداء بالإجماع،وهو الأصح اهـ. فهو تصحيح للقول الثاني الموافق لقولهما، وعليه فاعتبار يوم الأداء يكون متفقا عليه عنده، وعندها." (الدر المختار مع رد المحتار:2/286،دار الفکر،بیروت)
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

ابولبابہ شاہ منصور صاحب / فیصل احمد صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔