021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
نماز جنازہ میں قضاءشدہ تکبیرات کا حکم
..جنازے کےمسائلنماز جنازہ

سوال

سوال: اگر جنازہ میں کچھ تکبیریں رہ جائیں تو امام کا سلام پھیرنے کے بعد ان تکبیرات میں دعائیں پڑھی جائیں گی یا صرف تکبیریں کہہ کر سلام پھیر لیا جائے ؟؟

o

امام کے سلام پھیرنے کے بعد اگر اس بات كا اطمینان ہوکہ جنازہ اٹھانے میں کچھ وقت لگےگا ،تو ترتیب کے ساتھ فوت شدہ تکبیرات اور دعائیں پڑھ کر سلام پھیرے ، لیکن اگر اندیشہ ہو کہ دعائیں پڑھنے میں مشغول ہو گا تو لوگ جنازے کو کندھوں پر اٹھا لیں گے،تو اس وقت دعائیں پڑھے بغیر صرف فوت شدہ تکبیریں پڑھ کر سلام پھیردے۔

حوالہ جات

مراقي الفلاح - (1 / 231) "( ويوافقه ) أي المسبوق إمامه ( في دعائه ) لو علمه بسماعه على ما قاله مشايخ بلخ أن السنة أن يسمع كل صف ما يليه ( ثم يقضي ) المسبوق ( ما فاته ) من التكبيرات ( قبل رفع الجنازة ) مع الدعاء إن أمن رفع الجنازة وإلا كبر قبل وضعها على الأكتاف متتابعا اتقاءا عن بطلانها بذهابها" الفتاوى الهندية - (1 / 164) "وإذا جاء رجل وقد كبر الإمام التكبيرة الأولى ولم يكن حاضرا انتظره حتى يكبر الثانية ويكبر معه فإذا فرغ الإمام كبر المسبوق التكبيرة التي فاتته قبل أن ترفع الجنازة وهذا قول أبي حنيفة ومحمد رحمهما الله تعالى"
..

n

مجیب

متخصص

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔