021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
بچوں کو پروموٹ نہ کرنے پر اسکول سے فیس واپس مانگنا
74141اجارہ یعنی کرایہ داری اور ملازمت کے احکام و مسائلملازمت کے احکام

سوال

میرے بچے 5 سے 6 سال کے اسکول میں جا رہے ہیں ، میرے بیٹے کا نام سلیمان یار خان یوسفی اور بیٹی کا نام زہرہ زوہیب یوسفی ہے۔ چونکہ کوویڈ وبائی مرض مارچ 2020 میں شروع ہوا اور اسکول کچھ مہینوں کے لیے بند ہو گیا، پھر آن لائن اور آن سائٹ آن اور آف ہو گیا، لیکن میرے بچے کوویڈ وائرس کے خطرے کی وجہ سے اسکول نہیں گئے، اور سرکاری نوٹیفکیشن یہ تھا کہ اسکول نہ آنے کی وجہ اسکول بچوں کو سزا نہیں دے سکتا۔ چنانچہ میرے بچے مارچ 2020 سے سکول نہیں گئے اور میں وہ تمام فیس ادا کر رہا تھا جس کی درخواست سکول کر رہا تھا۔ میرے دونوں بچوں کو جون 2020 میں اگلی کلاس میں ترقی دی گئی۔

میں اسکول کی فیس باقاعدگی سے ادا کر رہا تھا جب اسکول کی طرف سے درخواست کی گئی؛ کیونکہ میں چاہتا تھا کہ میرے بچے سکول سسٹم میں ہوں، لیکن وہ مشکل سے اسکول سے کچھ پڑھ رہے تھے؛ کیونکہ وہ اسکول نہیں جاتے تھے جب یہ کھلا ہوا تھا۔ اور جب سکول آن لائن پڑھائی کی طرف جا رہا تھا تو وہ بیکار تھے۔ میں نے اسکول پرنسپل کو اس کے بارے میں ایک دو بار آگاہ کیا، لیکن کچھ نہیں کیا گیا۔

فروری 2021 کے مقابلے میں میں نے اصول کے ساتھ میٹنگ کی درخواست کی کہ پڑھائی میں مدد مانگیں کیونکہ میں فیس ادا کر رہا تھا، لیکن اس نے انکار کر دیا؛ اس نے کہا کہ ان کے پاس اتنے وسائل یا عملہ نہیں ہے جو ذاتی طور پر مدد کر سکیں، اور انہوں نے پوچھنا شروع کیا کہ آپ کب اپنے بچوں کو سکول بھیجنا شروع کریں گے ؟ میرا بچوں کو اسکول نہ بھیجنے کی وجہ یہ تھی کہ ریفلیکشنز سکول حکومت کے کسی بھی مقرر کردہ ایس او پی پر عمل نہیں کر رہا تھا، اس لیے میں بغیر ایس او پی کے پورے کلاس روم کی طاقت کے ساتھ بچوں کو بھیجنے کا خطرہ مول نہیں لے سکتا تھا۔ جب میں نے پرنسپل فہد ہارون سے اس کا ذکر کیا تو اس نے کہا کہ یہ آپ کی کال ہے کہ بچوں میں کوئی بھی ایس او پی پر عمل نہیں کرتا۔ میں نے پوچھا کہ اگر بچوں کو کچھ ہوا تو کیا یہ آپ کی ذمہ داری ہوگی؟ اس نے کہا نہیں، یہ والدین کی ذمہ داریاں ہوں گی۔

میں نے اسے بتایا کہ میں بچوں کو ویکسین کے بعد سکول بھیجوں گا، پھر اس نے مجھ سے پوچھا کہ جب آپ اسکول نہیں آرہے ہیں تو آپ اسکول کی فیس کیوں ادا کر رہے ہیں؟ تو میں نے پرنسپل سے واضح طور پر کہا: تاکہ میرے بچے سکول سسٹم میں رہیں اور اگلی کلاس میں دوسرے کی طرح پروموشن ہو۔

بعد میں انہوں نے بیٹی کی طرف سے پہلے ہیفز پروگرام سے منصوبہ بندی کی اور اسے چھوڑ دیا۔ میں  پھر دوبارہ اصول پر واپس گیااور اسکول سے مدد مانگی، لیکن اس نے پھر یہ کہہ کر انکار کر دیا کہ ہم آپ کے بچوں کو آن لائن نہیں پڑھا سکتے، جبکہ باقی تمام اسکول یہ سہولت دے رہے تھے۔ تو میں نے کہا ٹھیک ہے،  ہم اپنے بچوں کو خود گھر پر سکھائیں گے؛ کیونکہ کووڈ کی بلند لہروں کی وجہ سے یہ خطرناک ہے۔ پھر اگلی کلاس میں پروموشن کے وقت اسکول نے آن لائن اسسمنٹ لے کر تمام بچوں کو پروموٹ کیا، لیکن میرے بچوں کو کلاس 2 اور کلاس 5 کے فزیکل پیپر ٹیسٹ کے لیے اسکول بلایا اور میرے دونوں بچوں کو فیل کر دیا، میرے بچوں کی مدد اور پروموٹ کرنے سے انکار کر دیا، اگلی کلاس میں دوگنا چیک کرنے کے لیے میں اپنی بیٹی کو دوسرے اسلامی اسکول میں داخلہ کے لیے لے گیا ، جہاں اس نے ٹیسٹ دیا اور پاس ہو گئی، اور پانچویں کلاس میں محل پیش کیا جس کی مجھے توقع تھی۔

اب اس کی وجہ سے میں نے صورتِ حال کا تجزیہ کیا، اور اپنے بچوں کے وہ پیسے واپس کرنے کا کہا جو میں نے آخری سیشن کے لیے ادا کیے تھے؛ کیونکہ میں خالصتا پروموشن کے لیے مفت پیسے ادا کر رہا تھا اور پرنسپل کو اس کا علم تھا۔  جب میں نے رقم کی درخواست کی تو پرنسپل فہد ہارون نے مجھ سے واپسی کا فارم بھرنے کو کہا، اور  کہا کہ ایک بار جب آپ یہ فارم بھریں گے تو چیئرمین اطہر چاولہ صاحب رقم واپس کریں گے۔ میں نے فہد ہارون سے کہا کہ میں پچھلی تاریخ سے فارم بھروں گا تاکہ میں اپنے پورے سیشن کے پیسے حاصل کر سکوں؛ کیونکہ سکول نے میرے بچوں کی مدد نہیں کی اور نہ ہی پڑھایا۔ ایک بار جب میں نے فارم بھر دیا، اب وہ کافی وقت لے رہے تھے اور صرف کیس کو گھسیٹ رہے تھے تو میں نے فون کیا اور پرنسپل سے پوچھا کہ آپ مجھے فیس واپس کیوں نہیں دے رہے ہیں؟ اس نے کہا کہ یہ اطہر بھائی فیصلہ کریں گے کہ کتنی رقم کی واپسی ہوگی؟ جب مجھے جواب نہیں ملا تو میں نے اطہر چاولہ صاحب سے شکایت کی، اس نے مجھے بتایا کہ کسی بھی عالم سے مسئلہ پوچھیں، عالم جو بھی کہے گا، وہ کرے گا۔

مفتی صاحب، مجھے لگتا ہے کہ اسکول نے میرے بچوں کے ساتھ غلط کام کیا ، مجھے لگتا ہے کہ انہوں نے پیسے لے کر اور خدمات فراہم نہ کر کے مجھے چھین لیا۔ وہ سب جانتے تھے کہ میں صرف پروموشن کے لیے فیس دے رہا ہوں اور پھر بھی میرے بچوں کو فیل کیا جو بچپن سے ان کے شاگرد تھے، جو کچھ بھی انہیں سکھایا گیا تھا اسکول کی عکاسی تھی جو اس کی ملکیت ہونی چاہیے تھی، لیکن انہوں نے ایسا نہیں کیا۔ اس لیے آخری سیشن جو میرے بچے سکول نہیں گئے اور سکول نے نہیں پڑھایا، میں اس کے پیسے واپس چاہتا ہوں۔     

o

سوال میں ذکر کردہ معاملے کے دو فریق ہیں۔ ایک آپ اور دوسرا اسکول۔ ہمارے پاس چونکہ آپ کی طرف سے سوال آیا ہے، اس لیے ہم اس سوال کے مطابق اصولی جواب لکھ دیتے ہیں۔ اگر صورتِ حال اس سے مختلف ہوئی تو جواب بھی مختلف ہو سکتا ہے۔

آپ کے سوال کا اصولی جواب یہ ہے کہ اگر اسکول انتظامیہ نے امتحان کے بغیر بچوں کو پروموٹ نہیں کیا، بلکہ امتحان لے کر پاس ہونے والے بچوں کو پروموٹ کیا ہے ، اور آپ کے بچوں سے بھی انہوں دیانت داری سے امتحان لیا، ان کے ساتھ کوئی زیادتی نہیں کی، لیکن آپ کے بچے فیل ہوگئے تو اب آپ ان سے ادا کردہ فیسوں کی واپسی کا مطالبہ نہیں کرسکتے۔

آپ نے اسکول کے ساتھ بچوں کو تعلیم دینے کا عقدِ اجارہ کیا تھا، اسکول کی فیس بچوں کو تعلیم دینے کا معاوضہ ہوتا ہے، انہیں پاس کرنے کی گارنٹی نہیں ہوتی۔ لہذا جب اسکول بچوں کو تعلیم دے رہا تھا تو اس نے اپنی خدمات پیش کردی تھی، لیکن آپ نے خود ان کی خدمات حاصل نہیں کی۔ اگر آپ ایک عذر کی وجہ سے بچوں کو نہیں بھیج رہے تھے تو آپ کو یہ اختیار تھا کہ آپ بچوں کو اس اسکول سے نکال لیتے، جیسا کہ اسکول والوں نے آپ سے کہا بھی کہ جب آپ بچوں کو نہیں بھیج رہے ہیں تو پیسے کیوں دے رہے ہیں؟ لیکن آپ نے بتایا کہ فیس بچوں کو سسٹم میں باقی رکھنے کے لیے دے رہا ہوں۔ لہٰذا اگر انہوں نے آپ کے بچوں کو سسٹم میں باقی رکھا اور دیگر بچوں کی طرح آخر میں دیانت داری کے ساتھ ان کا بھی امتحان لیا جس میں وہ پاس نہیں ہوئے تو اب آپ ان سے ان فیسوں کو لوٹانے کا مطالبہ نہیں کر سکتے۔

حوالہ جات

.

     عبداللہ ولی غفر اللہ لہٗ

  دار الافتاء جامعۃ الرشید کراچی

 11/صفر المظفر/1442ھ

n

مجیب

عبداللہ ولی

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔