021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
امام پہلی رکعت میں چھوٹی ہوئی آیات کب پڑھے گا؟
76500نماز کا بیانتراویح کابیان

سوال

تراویح كے اندر دوگانے كی پہلی ركعت میں حافظ صاحب سے كچھ آیات چھوٹ جائیں، تو وہ ان آیات كو اسی دوگانے كی دوسری ركعت میں پڑھیں یا اگلے دوگانے كی پہلی ركعت میں؟ كون سا طریقہ درست ہے؟

o

دونوں طریقے درست ہیں، البتہ اسی دوگانہ کی دوسری رکعت میں پڑھنابہتر ہے اوراگر پڑھی گئی مقدار بہت زیادہ نہ ہو توزیادہ بہتر یہ ہےکہ چھوٹے ہوئے حصہ کے بعد جس قدر قرآن پڑھا ہے وہ دوبارہ پڑھ لے تاکہ قرآنی ترتیب بھی قائم رہے۔

حوالہ جات

الفتاوى الهندية (1/ 118)
وإذا غلط في القراءة في التراويح فترك سورة أو آية وقرأ ما بعدها فالمستحب له أن يقرأ المتروكة ثم المقروءة ليكون على الترتيب، كذا في فتاوى قاضي خان.

نواب الدین

دار الافتاء جامعۃ الرشید کراچی

۲۰شعبان۱۴۴۳ھ

n

مجیب

نواب الدین صاحب

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔