021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
رضاعت کا ایک مسئلہ(دادی کادودھ پینے کی صورت میں دادی کی نواسی سے نکاح جائز نہیں)
77447نکاح کا بیانجہیز،مہر اور گھریلو سامان کا بیان

سوال

ایک لڑکا   ہے  اس نے  اپنی دادی  کا دودھ  پیا  ہے ﴿ دادی  نے پلائی  ہے ﴾ اس  وقت لڑکے کی عمر  6 ماہ   تھی، اب اس لڑکے کا   نکاح  دادی کی  نواسی ﴿ بیٹی  کی بیٹیوں ﴾ سے ہو سکتا ہے یا نہیں؟

o

مسئولہ   صورت  میں  دودھ پلا نے  والی  عورت   اس  لڑکے کی رضاعی  ماں  ہے  ،اور  اس عورت  کی  نواسیاں  اس  لڑکے کی  رضاعی  بھانجیاں  ہوئیں، تو جس طرح   حقیقی  بھانجی  سے نکاح  حرام  ہے  اسی  طرح  رضاعی  بھانجی سے  بھی  حرام ہے ،  لہذا  ان دونوں  کے  آپس  نکاح  نہیں  ہوسکتا  ۔

حوالہ جات

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (3/ 217)
(ولا حل بين رضيعي امرأة) لكونهما أخوين وإن اختلف الزمن والأب (ولا) حل (بين الرضيعة وولد مرضعتها) أي التي أرضعتها (وولد ولدها) لأنه ولد الأخ
سنن الترمذي (2/ 307)
، عن عائشة قالت : قال رسول الله صلى الله عليه وسلم :(إن الله حرم من الرضاعة ما حرم من الولادة) هذا حديث حسن صحيح
والعمل على هذا عند عامة أهل العلم من أصحاب النبي صلى الله عليه وسلم وغيرهم . لا نعلم بنيهم في ذلك اختلافا .

احسان اللہ شائق عفا اللہ عنہ    

       دارالافتاء جامعة الرشید      کراچی

۲محرم الحرام ١۴۴۴ھ

n

مجیب

احسان اللہ شائق صاحب

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔