021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
رفاہی تنظیموں کو سیلاب زدگان کے لئے زکوة دینے کاحکم
77687زکوة کابیانان چیزوں کا بیان جن میں زکوة لازم ہوتی ہے اور جن میں نہیں ہوتی

سوال

جناب مفتی  صاحب عرض  یہ ہے کہ   سیلاب  زدہ  لوگوں  کی مدد کے لئے   جگہ جگہ  فنڈ جمع کرنے کا کام   چل رہا   ہے ، اس میں  لوگ  زکوة  کی رقم بھی دے رہے  ہیں ،آگے  جن تک   مدد  پہنچائی  جارہی ہے  ان میں مسلم غیر  مسلم ،سید غیرسید  ہر طرح کے لوگ  ہوتے ہیں    تو  کیا اس  طرح  زکوة دینے والوں کی زکوة  ادا ہوجائے گی ؟  

o

زکوة   کے حق  دار  نادار اور  غریب مسلمان ہیں ،اس کی ادائیگی  کے لئے ضروری  ہے کہ غریب  مستحق  شخص کو   مالک  بناکر دی جائے ۔کسی  غیر مسلم  یا غیر  مستحق  مالدار   یا سید کو   زکوة  دینے سے  زکوة ادا  نہ ہوگی ۔

لہذا  سیلاب متاثرین  کے لئے زکوة  کی رقم  دینے میں  دوباتوں کا اہتمام ضروری  ہے  1۔کہ  صرف ایسی  تنظیموں کو  زکوة کی رقم دی جائے  جن کے پاس مستحقین تک  زکوة  پہنچانے کا  صحیح  انتظام   موجود ہو2۔  ان کو  بتاکر دی جائے  کہ یہ زکوة  کی رقم ہے تاکہ  وہ صحیح  مصرف میں خرچ کرسکیں ۔ منا سب اور  بےغبار  صورت  یہ ہے  کہ صحیح  حیلہ تملیک  کےبعد ہی   امدادی  تنظیموں  کے پاس  جمع کروائی جائے۔

 یاد رہے کہ جس پر زکوة  فرض  ہے اس کے ذمے  یہ بھی  لازم  ہے  کہ زکوة   متحقین تک  پہنچائے ۔لہذااگر کسی  شخص نےاپنی تحقیق وجستجو کے بعد کسی  کو  مستحق  سمجھ کر زکوة حوالے  کیا لیکن بعد   میں پتہ  چلا  کہ  لینے والا شخص زکوة کا  مستحق نہیں  تھا  ۔غیر  مسلم یا سید وغیرہ  تھا   ،تو  زکوة  ادا  ہوگئی دوبارہ  ادا کرنے کی ضرورت  نہیں کیونکہ دینے  والے نے مصرف  تلاش  کرنے  کی ذمے داری  پوری کرکے  دی ہے ۔ لیکن اگر کسی   نےبلاتحقیق زکوة  کسی کو  زکوة دیدی  پھر بعد میں پتہ  چلا  کہ  جس  کو دی ہے  وہ غیر مستحق   تھاتو زکوة  ادا  نہیں ہوئی۔  اس شخص پر  دوبارہ  ادا کرنا لازم ہے ۔ اس لئے  زکوة  ادا کرتے وقت صحیح  مصرف  تلاش کرکے  ادا کریں ۔

حوالہ جات

(دفع بتحر) لمن يظنه مصرفا (فبان أنه عبده أو مكاتبه أو حربي ولو مستأمنا أعادها)
ما مر (وإن بان غناه أو كونه ذميا أو أنه أبوه أو ابنه أو امرأته أو هاشمي لا) يعيد لأنه أتى بما في وسعه، حتى لو دفع بلا تحر لم يجز إن أخطأ.
 (قوله: لمن يظنه مصرفا) أما لو تحرى فدفع لمن ظنه غير مصرف أو شك ولم يتحر لم يجز حتى يظهر أنه مصرف فيجزيه في الصحيح خلافا لمن ظن عدمه، وتمامه في النهر.
قوله: ولو دفع بلا تحر) أي ولا شك كما في الفتح. وفي القهستاني بأن لم يخطر بباله أنه مصرف أو لا، وقوله لم يجز إن أخطأ أي إن تبين له أنه غير مصرف فلو لم يظهر له شيء فهو على الجواز وقدمنا ما لو شك فلم يتحر أو تحرى وغلب على ظنه أنه غير مصرف.     

احسان اللہ شائق عفا اللہ عنہ    

       دارالافتاء جامعة الرشید     کراچی

۳صفر  ١۴۴۴ھ

n

مجیب

احسان اللہ شائق صاحب

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔