021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
امدادی فنڈ میں سودی رقم جمع کروانے کاحکم
77688سود اور جوے کے مسائلانشورنس کے احکام

سوال

عرض یہ ہے کہ  کسی کے  پاس   کچھ  سود کی  رقم رکھی  ہو    ئی  ہو  توکیا  اس کو سیلاب زدگان کی امدادی    فنڈ میں  جمع  کروائی جاسکتی  ہے ؟

o

سودی  لین دین شرعا  حرام ہے، اگر کسی   نے کوئی  سودی معاملہ کیا ہے  تواس کے ذمے لازم  ہے  فوری  طورپر  معاملہ  ختم  کردے اور توبہ استغفار کرے۔اگر سودی  لین دین  سے کسی کے پاس   کچھ مال  جمع ہوگیا ہے تو  اس  کا  حکم یہ ہے کہ اگر   ﴿سودی  اداروں  کے  علاوہ   اصل ﴾مالک کو کو واپس کرنا ممکن ہو تو سود  کی رقم  مالک کو واپس کی جائے   ورنہ  بلانیت ثواب  صدقہ   کر دی جائے ۔  

سودی  رقم  بطور صدقہ سیلاب زدگان  کو  بھی دیاجاسکتا  ہے۔

حوالہ جات

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (6/ 385)
وقال في النهاية: قال بعض مشايخنا: كسب المغنية كالمغصوب لم يحل أخذه، وعلى هذا قالوا لو مات الرجل وكسبه من بيع الباذق أو الظلم أو أخذ الرشوة يتورع الورثة، ولا يأخذون منه شيئا وهو أولى بهم ويردونها على أربابها إن عرفوهم، وإلا تصدقوا بها لأن سبيل الكسب الخبيث التصدق إذا تعذر الرد على صاحبه اهـ

احسان اللہ شائق عفا اللہ عنہ    

 دارالافتاء جامعة الرشید     کراچی

۳صفر  ١۴۴۴ھ

n

مجیب

احسان اللہ شائق صاحب

مفتیان

سیّد عابد شاہ صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔