021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
ٹیوشن کی وجہ سے نماز قضاء کرنے کاحکم
71606نماز کا بیاناوقاتِ نمازکا بیان

سوال

زید کی ٹیوشن عصر کے وقت ہے اور اکثر نماز فوت ہوجاتی ہے، کیا زید گناہ گار ہوگا؟ یا نماز قضا پڑھنے  سے گناہ سے بچ جائے گا؟

                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                    

o

ویسے تو ہر نماز کی اپنی  فضیلت  ہے لیکن احادیث میں عصر کی نماز کی ادائیگی کی زیادہ تاکیدآئی ہے کیوں کہ عام طو ر پر لوگ اس وقت بہت زیادہ مصروف ہوتے ہیں اور عصر کاوقت بھی دوسری نمازوں کی بنسبت کم ہوتاہے ۔

اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے إِنَّ الصَّلَاةَ کَانَتْ عَلَی الْمُؤْمِنِینَ کِتَابًا مَوْقُوتًا یعنی نماز مسلمانوں پر اپنے وقت مقررہ میں فرض ہے، پس آیت کی رو سے وقت مقررہ ہی میں ادا کرنا ضروری ہوا، لہٰذا ملازمت کے دوران ہی کسی طرح ادا کرنے کی تدبیر کریں اور سنت نہ پڑھ سکیں تو صرف فرض چار رکعت ادا کرلیں نہ پڑھ سکیں تو گھر آکر قضا کرسکتے ہیں لیکن قضا کرنے کی مسلسل عادت بنالینا بہت برا ہے یہ فریضہ خداوندی کی کامل ادائیگی نہیں کہلائے گی، اگر کبھی فجر کی نماز قضا ہوجائے تو اسی روز زوال سے پہلے تک قضا کرنے کی صورت میں سنت کی بھی قضا کریں گے اور زوال کے بعد جب کبھی قضا کریں تو صرف فرض کی قضا ہوگی۔ دوسری سنن موٴکدہ کی قضا نہیں ہوتی ثواب سے محرومی ہوتی ہے اور قصدا چھوڑنا موجب گناہ ہوتا ہے۔     

حوالہ جات

تعظيم قدر الصلاة لمحمد بن نصر المروزي (2/ 958)
 عن ابن مسعود، رضي الله عنه، قال: «سيكون عليكم أمراء يميتون صلاة العصر حتى يقال شرق الموتى وصلوها لوقتها»
موطأ مالك ت الأعظمي (2/ 191)
عن عمرو بن رافع؛ أنه قال: كنت أكتب مصحفا لحفصة أم المؤمنين. فقالت: إذا بلغت هذه الآية فآذني {حافظوا على الصلوات والصلوة الوسطى وقوموا لله قانتين} [البقرة 2: 238] فلما بلغتها، آذنتها. فأملت (2) علي - حافظوا [ص:192] على الصلوات والصلاة الوسطى وصلاة العصر، وقوموا لله قانتين.
التفسير الوسيط لطنطاوي (15/ 500)
۔۔۔ومنهم من يرى أن المقصود به: وقت صلاة العصر، وقد صدر صاحب الكشاف تفسيره لهذه الآية بهذا الرأى فقال: أقسم- سبحانه- بصلاة العصر لفضلها، بدليل قوله- تعالى-: حافِظُوا عَلَى الصَّلَواتِ وَالصَّلاةِ الْوُسْطى - وهي صلاة العصر-، وقوله صلى الله عليه وسلم: «من فاتته صلاة العصر فكأنما وتر أهله وماله» ولأن التكليف في أدائها أشق لتهافت الناس في تجاراتهم ومكاسبهم آخر النهار ..

وقاراحمد بں اجبرخان

دارالافتاء جامعۃ الرشیدکراچی              

  ۲۶جمادی الثانی ۱۴۴۲

n

مجیب

وقاراحمد بن اجبر خان

مفتیان

آفتاب احمد صاحب / محمد حسین خلیل خیل صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔