021-36880325,0321-2560445

5

ask@almuftionline.com
AlmuftiName
فَسْئَلُوْٓا اَہْلَ الذِّکْرِ اِنْ کُنْتُمْ لاَ تَعْلَمُوْنَ
ALmufti12
غصہ کی حالت میں کہا کہ ” میری بیگم فارغ ہے”
74923طلاق کے احکامالفاظ کنایہ سے طلاق کا بیان

سوال

میں نے غصہ کی حالت میں اپنی بہن سے کہا کہ " میری بیگم فارغ ہے" اور ساتھ میں کہا جہاں چاہے نکاح کرے،اس دوران یہ تمام باتیں  بیگم نے بھی سن لیں ، میرا ارادہ  طلاق کا نہیں تھا، کیا یہ طلاق ہو گئی ؟اگر ہو گئی تو واپسی کی کیا صورت ہے؟

o

صورتِ مسئولہ میں اگر آپ  نے طلاق کی نیت سے " میری بیگم فارغ ہے " کہا تھا تو اس سے ایک طلاقِ بائن واقع ہوگئی ہے،  اور اگر طلاق کی نیت سے نہیں کہا لیکن اس وقت طلاق کا     تذکرہ چل رہا تھا( جیسا کہ سوال سے معلوم ہو رہا ہے)پھر بھی ایک طلاقِ بائن واقع ہوگئی ہے،   رجوع جائز نہیں، البتہ باہمی رضامندی سے تجدیدِ نکاح کرنا جائز ہوگا،دوبارہ  مہر بھی ادا کرنا ہوگا ،اور نکاح کے بعد صرف دو طلاقوں کا اختیار  باقی رہے گا۔

حوالہ جات

والكنايات ثلاثة أقسام: قسم منها يصلح جوابا ولا يصلح ردا ولا شتما، وهي ثلاثة ألفاظ: أمرك بيدك، اختاري، اعتدي، ومرادفها، وقسم يصلح جوابا وشتما ولا يصلح ردا، وهي خمسة ألفاظ: خلية، برية، بتة، بائن، حرام، ومرادفها، وقسم يصلح جوابا وردا ولا يصلح سبا وشتما؛ وهي خمسة أيضا: اخرجي، اذهبي، اغربي، قومي، تقنعي، ومرادفها، ففي حالة الرضا لا يقع الطلاق بشيء منها إلا بالنية، والقول قوله في عدم النية، وفي حالة مذاكرة الطلاق يقع بكل لفظ لا يصلح للرد وهو القسم الأول والثاني، وفي حالة الغضب لا يقع بكل لفظ يصلح للسب والرد وهو القسم الثاني والثالث، ويقع بكل لفظ لا يصلح لهما بل للجواب فقط وهو القسم الأول.
(اللباب في شرح الكتاب:3/44)
إذا كان الطلاق بائنا دون الثلاث فله أن يتزوجها في العدة وبعد انقضائها.
(الفتاوی الھندیۃ:1/472)

محمد طلحہ شیخوپوری

دار الافتاء ،جامعۃ الرشید،کراچی

17 جمادی الاولی /1443ھ

n

مجیب

محمد طلحہ بن محمد اسلم شیخوپوری

مفتیان

فیصل احمد صاحب / شہبازعلی صاحب

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔